ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
دین
تاریخ
معلومات
سائنس
دلچسپ وعجیب
طنزومزاح
جنگ و سامان جنگ
متفرق
تہذیب واخلاق
فن و فنکار
زبان و بیان
حالات و واقعات
حیوانیات
علم وادب
حشرات الارض
کھیل
پرندے
عالم اسلام
تاریخِ اسلام
جغرافیہ
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
مسلم خواتین
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
محمد علی ادیب
غلام عباس
رفیع الدین ہاشمی
کاشف شفیع
عافیہ رحمت
عافیہ رحمت
بن یامین
ڈاکٹر صفیہ سلطانہ صدیقی
محمد فیصل شہزاد
فائزہ حمزہ
حفصہ صدیقی
ابن آس
کلیم چغتائی
مریم سرفراز
مبشر علی زیدی
نیّر کاشف
قانتہ رابعہ
رؤف پاریکھ
رومانہ عمر
خواجہ حسن نظامی
شریف شیوؔہ
عبد الرحمٰن مومن
عنایت علی خان
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقمضامیندلچسپ مضامینباتیں جنوں کی
خرابی
  • JUser: :_load: نہیں کرسکتا to load user with id: 43

باتیں جنوں کی

محمد الیاس نواز

....................................................

نہ نظر آنے والی مخلوق پر ایک دل چسب مضمون۔

....................................................

جنات کے بارے میں ہر کسی نے سنا بھی ہوگااور کچھ نہ کچھ پڑھا بھی ہوگا۔اور کچھ نہیں تو کہانیوں میں تو جنات کے بارے میں ضرور پڑھا ہوگا کہیں کوئی جن کسی شہزادی کو اٹھاکر لے جاتا ہے تو کہیں کسی کو کچا چبا ڈالنے کی بات کرتا ہے۔بعض بچوں کو تو پسند ہی ایسی کہانیاں ہوتی ہیں جن میں جنات وغیرہ کاذکر ہو۔توآئیے آج ہم اس عجیب وغریب مخلوق کے بارے میں جانتے ہیں کہ یہ کیا ہیں؟

(۱)جنا ت کی حقیقت

..........................
بعض لوگ جنا ت کے وجود سے انکار کرتے ہیں۔حقیقت میں وہ کم علم ہیں۔کیو نکہ قرآن وحدیث سے نہ صرف ہمیں ان کے وجود کے بارے میں واضح پتا چلتا ہے بلکہ ان کے بارے میں اللہ کے احکام کا بھی پتا چلتا ہے اور یہ بھی پتاچلتا ہے کہ اللہ نے اس مخلوق کو کس

چیز سے بنایا، ان کی غذاء کیا ہے اوریہ کرتے کیا ہیں۔

(۲)جنات کی بناوٹ

..........................
اللہ نے قرآن پاک میں سورہ رحمٰن کی آیت(۱۵) میں فرمایا کہ ’’انسان کو اس نے ٹھیکری جیسے سوکھے سڑے گارے سے بنایااور جن کوآگ کی لپٹ سے پیداکیا۔‘‘ مگر وہ آگ جلتی ہو ئی آگ نہیں ہے بلکہ جس طرح انسان کو اللہ نے مٹی سے بنایا ہے مگر وہ مٹی معلوم نہیں ہو تا یعنی انسان کا مادہ اللہ نے مٹی سے پیدا کیا اسی طرح جنات کا مادہ اللہ نے آگ سے پیدا کیا اگر جنات جلتی ہوئی آگ ہو تے تو ہمارے گھروں میں ان کے آنے جانے سے آگ لگ جاتی۔
(۳)جنات اور مذہب

..........................
جنات بھی انسانوں کی طرح مختلف مذاہب پر ایمان رکھتے ہیں۔ان میں بھی مسلم،عیسائی،ہندو،یہودی اوردیگرمذاہب پر ایمان رکھنے والے ہیں موجود ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ ان میں شیعہ ،سنی اور دیگرفرقے بھی پائے جاتے ہیں۔
(۴)جنات کی رہائش

..........................
جنگلوں،بیابانوں،ویرانوں اور پہاڑوں کے علاوہ شہروں،بازاروں،قبرستانوں اورباغوں میں رہتے ہیں اور سب سے بڑھ کر ان کا ڈیرہ اس گھر میں ہوتا ہے کہ جس گھر میں بغیر بسم اللہ پڑھے داخل ہوا جائے۔اس کے علاوہ بیت الخلاء جیسی گندی جگہ میں بھی رہتے ہیں اسی لئے بیت الخلاء میں دعاء پڑھ کے جانا چاہئے۔
(۵)جنات کی غذاء

..........................
حدیث میں آتا ہے کہ جنات ہڈیاں کھاتے ہیں۔ہمارے کھانے کے بعد اللہ کی قدرت سے ہڈیوں پر ان کے لئے اتنا ہی گوشت لگ جاتا ہے۔مسلما ن جنوں کوصرف وہ ہڈی کھا نے کی اجازت ہے جس پر بسم اللہ پڑھی گئی ہو باقی کفار جن کھاتے ہیں۔اس کے علاوہ بسم اللہ پڑھے بغیریاالٹے ہاتھ سے کھانا کھا یا جائے تو جنات اس میں شریک ہو جا تے ہیں۔
(۶)ایک دلچسپ واقعہ

..........................
ڈیرہ اسما عیل خان کے ایک نواحی گاؤں میں مولوی قاسم صاحب رہتے تھے جنہوں نے چلہ کشی کرکے جنات کو قابو کیا ہواتھا۔ایک مرتبہ جنات انکو اپنے کسی فرد کی شادی میں لے گئے وہاں جاکر انھوں نے ایک جن کونیا تہہ بند(چادر)باندھے دیکھاتوانکو شک ہوا کہ یہ نئی چادر انکی ہے۔وہ ذہنی کشمکش میں تھے کہ انہیں ایک ترکیب سوجھی اور انہوں نے اس حلوے میں سے تھوڑا سا اٹھا کر چادر پہ مل دیا جوجنات نے شادی میں پکایا ہوا تھا۔واپس آکر جب کپڑوں کی صندوق کھول کر چادراٹھاکر دیکھی تو حلوہ لگا ہوا تھااس واقعے کے بعدوہ ہمیشہ نصیحت کرتے تھے کہ کوئی چیزرکھتے ،اٹھاتے اور استعمال کرتے ہوئے بسم اللہ ضرور پڑھوورنہ جنات ہروہ چیز استعمال کرتے ہیں جس پر اللہ کا نام نہ لیا گیا ہو۔اورہمیں تو اللہ کے نبی ﷺ نے ہر چیزکاطریقہ اوردعائیں سکھائی ہیں۔مولوی قاسم تو اللہ کو پیارے ہوگئے مگر ان کے بیٹے مولوی حق نواز اب بھی ہیں اور لمبا عرصہ مسجد کے امام رہے ہیں۔
(۷)جنات کی صورت

..........................
جنا ت کی صورت انتہائی بھیانک ہوتی ہے۔اور ان میں بھی شیطا ن کی اور زیادہ بھیانک ہوتی ہے ان سے ڈرنے کی وجہ ایک تو ان کا تنگ کرنا ہے اور دوسری وجہ ان کی بد صورتی ہے۔کیونکہ انسان نے نہ تو اتنی بد صورتی دیکھی ہوتی ہے اور نہ ہی اس کا تصور کر سکتاہے اسی لئے جب اتنی زیادہ بدصورتی اچانک نظر آتی ہے تو وہ انسان کے برداشت سے باہر ہو جاتی ہے اور انسان اسکی تاب نہیں لاسکتااوربے ہوش ہوجاتاہے۔
(۸)جنات کی قوت

..........................
بے شک اللہ نے جنات کو بہت قوت والا بنایا ہے۔اوریہ وہ کام بھی آسانی سے کر لیتے ہیں جو انسان کے بس کی بات نہیں ہیں مثلاً:۔
(۱)بھیس بدل کر انسان یا کسی جانور کی شکل اختیار کر لینا۔
ّ(۲)بھاری سے بھاری چیز کو چند لمحات میں ایک جگہ سے دوسری جگہ پہنچانا۔
(۳)دور دراز سے خبریں لانا۔
(۴) جس کام کو انسان سالوں میں کرتا ہے اسے دنوں میں انجام دینا۔
(۹)جنات اور فرشتے

..........................
بعض لوگ جن اور فرشتوں کو ایک ہی مخلوق سمجھتے ہیں حالانکہ ان میں تین فرق ہیں۔
(۱)فرشتے نور سے بنائے گئے ہیں جبکہ جنوں کو آگ سے بنایا گیا ہے۔
(۲)جنوں کو انسان کی طرح اختیار ہے کہ چاہیں تو نیکی اختیار کریں اور چاہیں توبدی اختیا کریں جبکہ فرشتوں کو یہ اختیا ر نہیں ہے اور وہ صرف وہی کام کرتے ہیں کہ جن کاموں کا اللہ کی طرف سے انہیں حکم دیا جاتا ہے۔
(۳)فرشتے نہ کھاتے ہیں اور نہ پیتے ہیں اور نہ ان کی اور کسی قسم کی خواہشات ہیں جبکہ جنات کھاتے پیتے ہیں اور خواہشات بھی رکھتے ہیں ۔
(۱۰)جنات اورشیطان

..........................
شیطان بھی اصل میں جن ہی ہے۔جب اللہ نے انسان کو اشرف المخلوقات بنایا تو ابلیس کو انسان سے حسد ہوگیا کہ برسوں سے عبادت میں نے کی اور اعلیٰ رتبہ انسان کو کیوں ملاپھرجب اللہ نے جنوں اور فرشتوں کوحکم دیا کہ آدم ؑ کوسجدہ کریں تو ابلیس نے سجدہ سے انکار کردیا اورکہاکہ ’’اے اللہ آپ نے مجھے آگ سے پیداکیااور اس انسان کو مٹی سے لہٰذا میں اس سے اچھا ہوں تو اس کو سجدہ کیوں کروں‘‘اس دن سے اللہ نے اس کو اپنے دربار سے بھگادیااوراس دن سے آج تک اسکو ’’شیطان ‘‘ یعنی سر کش اور متکبر کہا جا تا ہے ۔
(۱۱)جنات اور انسان

..........................
انسان کو اللہ نے اشرف المخلوقات بنا یا ہے ۔اور آزاد بنا یانہ ہی کسی مخلوق کو اس پر نہ مسلط کیا اور نہ اسے کسی مخلوق کا غلام بنایا بلکہ جہاں ضرورت پڑی کائنات کی دوسری مخلوق کو انسان کا غلام بنا دیا۔طاقت ور ہونے کی وجہ سے جنات انسان کو تنگ کرتے رہتے ہیں مگر کبھی انسان پر حکومت نہیں کر سکے بلکہ انسان نے ان پر حکومت کی ہے ۔اللہ نے حضرت سلیمان ؑ کو جہاں کائنات کی دوسری چیزوں پر حکومت عطاء فرمائی وہیں ان کو جنات پربھی حاکم بنایا ۔آپ نے ان سے عمارات تعمیر کروائیں،بڑے بڑے حوض بنوائے اور اتنی بڑی دیگیں بنوائیں کہ اپنی جگہ سے ہل نہیں سکتی تھیں اور جو جن سرکشی کرتا اسے سخت سزا دی جاتی اور وہ قید کر دیا جاتا۔یہی وجہ ہے کہ آج بھی آپ کا رعب قائم ہے اورجنات آپ کا نام سن کر کانپ جاتے ہیں۔جب سلیمان ؑ کا انتقال ہوا اس وقت بھی جنات کام میں مصروف تھے اور سلیمانؑ اپنی لاٹھی کے ساتھ ٹیک لگائے انکی نگرانی کررہے تھے کہ آپ کا انتقال ہو گیا نہ جانے کتناعرصہ آپ کا جسم یوں ہی لاٹھی کے سہارے کھڑا رہا اور جنات یہ سمجھ کر کام کرتے رہے کہ شاید آپ نگرانی کر رہے ہیں آخر آپ کی لاٹھی کو دیمک کھا گئی اور آپ کا جسم گر پڑا اور جنات نے سمجھ لیا کہ آپ کا انتقال ہوگیا ہے ورنہ پتا نہیں کتناعرصہ اور جنات کام کرتے رہتے۔
(۱۲)جنات کی دشمنی

..........................
انسان اور شیطان جنات کی پیدائشی دشمنی ہے اور قیامت تک رہے گی کیونکہ یہ شیاطین اپنی بے عزتی اورذلت و خواری کاذمہ دارانسان کو سمجھتے ہیں کہ نہ انسان پیداہوتا،نہ عزت پاکر اشرف المخلوقات بنتا،نہ انہیں انسان کو سجدہ کرنے کا حکم ملتا،نہ وہ انکار کرتے اور نہ اللہ انہیں ذلیل کرکے اپنے دربار سے نکالتا ۔ہمیشہ کی دشمنی نبھانے کے لئے شیطان جنات نہ صرف انسان کو ذہنی اور جسمانی تکالیف پہنچاتے ہیں بلکہ حدتو یہ ہے کہ انسان کو اپنے رب اور دین سے بھی پھیر نے کی کوشش کرتے ہیں تاکہ انسان نہ دنیا کا رہے اور نہ آخرت کا۔
(۱۳)شیطان کالشکر

..........................
انسان کو راہِ راست سے ہٹانے کے لئے شیطان جنات بڑے منظم انداز میں کام کرتے ہیں۔اس کام کے لئے شیطان نے باقاعدہ فوجیں تشکیل دیں اور اپنا تخت سمندر پر بچھایاجہاں ان کے باقاعدہ اجلاس بلائے جاتے ہیں اور شیطان جنات کا سردارابلیس لعین اپنے چیلوں کو نئے نئے احکام دیتا ہے اور یہ بھی غور کیا جاتا ہے کہ آدم کی اولاد کو کس کس طرح تباہ کیا جاسکتا ہے۔ان اجلاسوں میں اچھی کارکردگی دکھانے والوں کو ابلیس اپنے پاس بٹھاتا ہے اور ان کی تعریف کرتا ہے۔
(۱۴)جنات کی شرارتیں

..........................
شیطان جنات انسان کے پیدائشی دشمن ہیں اورانسان کو ذہنی اور جسمانی طور پر طرح طرح سے تنگ کرتے ہیں ۔مثال کے طور پر:۔
(۱)انسان کو راستے سے بھٹکانا۔
(۲)گھروں میں راتوں کو آگ لگانا۔
(۳)بیماری پھیلانا۔
(۴)موت کے وقت کلمہ سے روکنا۔
(۵)نماز میں تنگ کرنا۔
(۶)دلوں میں وسوسے پیداکرنا۔
(۷)خواب میں انسان کو تنگ کرنا۔
(۸)انسان پرسوار ہوجانا۔
ؐ(۹)انسان کی ضرورت کی اشیاء چوری کرنا۔
(۱۰)تنگ کرنے کے لئے چیزوں کو ادھرادھر کر دینا۔
(۱۱)انسان کو رکھی ہوئی چیزیں اور کام بھلادینا خاص کر نیکی کے کاموں کو۔
(۱۲)انسانوں میں بد گمانیاں پیدا کر کے آپس میں لڑادینا۔
(۱۵)جنا ت کی بے بسی
اللہ نے جہاں جنات کو انسان سے کہیں زیادہ اورعجیب وغریب صلاحیتیں عطاء فرمائیں وہیں ان کے لئے ایک حد مقرر فرمادی کہ اس حد سے آگے جانے کی انہیں اجازت نہیں اور وہاں آکر وہ بے بس ہو جاتے ہیں۔ان میں تین بڑی اہم ہیں۔
(۱)اللہ نے معجزات صرف انبیاء کوعطاء فرمائے ہیں جنا ت معجزات نہیں دکھا سکتے ۔
(۲)جنات محمدﷺ کی مبارک صورت نہیں بنا سکتے ۔نہ اصل میں اور نہ خواب میں ۔
(۳)جنا ت آسمان کی خبریں بھی نہیں لا سکتے ۔
جبکہ پہلے جنات کو یہ اختیار حاصل تھا کہ آسمان سے باتیں سن کر زمیں پرآکر انسانوں کو کہتے تھے کہ آج یہ بات ہونے والی ہے اور جب وہ کام ہو جاتا تو انہیں گمراہ کرتے اور اللہ سے دورکر تے ۔ مگر اب اللہ نے آسما ن کے تاروں کی ذمہ داری لگادی ہے جوشیطان کو آسمان کی طرف آتا دیکھ کر اس کے پیچھا کرتے ہیں اور اسے واپس بھگا دیتے ہیں۔اس کا ذکر سورہ جن میں آیا ہے ۔یہ اللہ کا انسانیت پر احسان ہے کہ جنات کو ان تین باتوں پر اختیا ر نہیں ورنہ یہ انسانوں کومعجزے دکھا کر،آپﷺ کی صورت دکھا کر یاآسمانی باتیں بتاکر گمراہ کرنے میں وہ وہ کام کر دکھا تے کہ انسان پھنس کررہ جاتا ۔

مزید اس صنف میں: آبی اسکول »