ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
دین
تاریخ
معلومات
سائنس
دلچسپ وعجیب
طنزومزاح
جنگ و سامان جنگ
متفرق
تہذیب واخلاق
فن و فنکار
زبان و بیان
حالات و واقعات
حیوانیات
علم وادب
حشرات الارض
کھیل
پرندے
عالم اسلام
تاریخِ اسلام
جغرافیہ
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
مسلم خواتین
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
محمد علی ادیب
غلام عباس
رفیع الدین ہاشمی
کاشف شفیع
عافیہ رحمت
عافیہ رحمت
بن یامین
ڈاکٹر صفیہ سلطانہ صدیقی
محمد فیصل شہزاد
فائزہ حمزہ
حفصہ صدیقی
ابن آس
کلیم چغتائی
مریم سرفراز
مبشر علی زیدی
نیّر کاشف
قانتہ رابعہ
رؤف پاریکھ
رومانہ عمر
خواجہ حسن نظامی
شریف شیوؔہ
عبد الرحمٰن مومن
عنایت علی خان
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقمضامین تاریخی مضامینبغاوت یا۔۔۔۔؟
خرابی
  • JUser: :_load: نہیں کرسکتا to load user with id: 43

بغاوت یا۔۔۔۔؟

محمد الیاس نواز

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۸۵۷ء میں مسلمانوں اور ہندوؤں نے انگریزوں کے خلاف بغاوت کیوں کی؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہندوستان کا زوال اسی وقت شروع ہو گیا تھا جب عظیم مغل شہنشاہ اورنگ زیب عالمگیر کا انتقا ل ہوا۔اورنگ زیب کے انتقال کے بعداس کے دونوں بیٹے اعظم اور معظم کے درمیان سلطنت کے حصول کے لئے جنگ شروع ہو گئی۔اعظم مارا گیا اورمعظم تخت نشین ہوا۔تخت پر بیٹھے صرف پانچ سال ہی گزرے تھے کہ معظم کا ذہنی توازن خراب ہو گیااور وہ پاگل سا ہو گیا۔اس کے بعد ہندوستان مستقل خانہ جنگی کا شکار ہو گیا۔راجوں ،مہاراجوں اور نوابوں کے در میان اختلافات طویل ہو تے گئے اور حصول اقتدار کی کشمکش روز بروز بڑھتی گئی۔ہندوستان کا دارالخلافہ دہلی کمزور پڑچکا تھا۔مہا را شٹر کے جاہل اور سخت جان دیہاتی کسان مرہٹے جب چاہتے دہلی آکر شہر کو لوٹ لیتے اور قتل وغارت گری کرتے۔ان حالات میں جبکہ ہندوستان کے لوگ آپس میں دست و گریبان تھے کس کو ہوش تھا کہ وہ دیکھے کہ انگریز ہندوستان میں کیا گُل کھلا رہے ہیں۔انگریز جوکہ تجارت کے لئے پہلے سے موجود تھے حالات کا فا ئدہ اٹھا کر سیاست میں کود پڑے۔اپنا اثرو رسوخ بڑھانا شروع کیا۔راجوں ،مہاراجوں اور نوابوں کی خوشامد کرکے اور کبھی ان کو امداد دے کر ایک دوسرے کے ساتھ لڑانا شروع کردیا۔کبھی وزیروں کو خرید کر ان سے بغاوت کرا دی۔ہوتے ہوتے بالآخر انگریز نے ہندوستان کے حکم رانوں کو سا زشیں کرکے اور آپس میں لڑا لڑا کر کافی کمزور کر دیا اور ساتھ ہی یہ اندازہ بھی لگا لیا کہ ہندوستان کی فوجوں کے پاس اسلحہ زیادہ جدید نہیں اور نہ ہی ان میں اب نظم وضبط رہا ہے۔سپاہی بہادر ہیں مگر راہنما کمزور ہیں۔ہندوستانیوں نے آپس کے اختلاف اتنے بڑھائے ہیں کہ اب متحد نہیں ہو سکتے۔ان کو سازشوں کے ذریعے کمزور کیا جا سکتاہے۔یہ صرف اپنے بارے میں سوچتے ہیں انہیں ملک اور قوم کا خیال نہیں رہا۔یہ اندازہ لگانے کے بعد انگریز کھل کر سامنے آگیااور کھلے بندوں لڑائیاں شروع کر دیں اور پے در پے شکستیں کھائیں۔ادھر دہلی کی کمزوری کا فائدہ اٹھا کرمرہٹے جب چاہتے منہ اٹھا کر دہلی کو لوٹنے آجاتے۔اس کے علاوہ قتل وغارت گری الگ مچاتے۔افغانستان کا بادشاہ احمد شاہ ابدالی ان حالات پر نظر رکھے ہوئے تھا۔اسے بڑا طیش آیاکچھ مسلمانو ں نے بھی خط لکھ کر اس سے مدد مانگی تو وہ قہر خدا وندی بن کرمرہٹوں پر آنازل ہوا۔پانی پت کے میدان میں اس نے مرہٹوں کو ایسا سبق سکھایا کہ رہتی دنیا تک یاد رکھیں گے۔مسلمانوں کی خواہش تھی کہ دہلی کا تخت احمد شاہ ابدالی سنبھال لے اور ایک مرتبہ پھر ایک مضبوط اور متحدہ ریا ست قائم ہو جائے مگر بد قسمتی سے ایسا نہ ہو سکا۔اس کے وزیرو ں نے اس سے کہا کہ یہاں کی آب وہوا ٹھیک نہیں ہے حالانکہ مغلو ں کا سب سے پہلا بادشاہ جس نے ہندوستان میں مغل باد شاہت کی بنیاد رکھی ظہیر الدین محمد بابر بھی افغانستان سے ہی آیا تھا۔دوسری طرف انگریز نے جب بار بار شکستوں کا منہ دیکھا تواس کو اندازہ ہوگیاکہ ہم صر ف میدان میں جنگ نہیں جیت سکتے۔اس لئے اس نے چالبازی اور سازش کا ہتھیار استعمال کیااور بڑی جدو جہد کے بعد ہندوستان پر قبضہ کرلیا۔انگریز کا اقتدار بر صغیرکے عوام کے لئے بڑا ہی منحوس ثابت ہوااور عوام کو بڑی مصیبتوں کا سامنا کرنا پڑا۔انگریز کی کوشش یہ تھی کہ وہ کسی نہ کسی طرح زیادہ سے زیادہ دولت لوٹ کر برطانیہ لے جائیں۔اسکو یہاں کے عوام سے کوئی غرض نہیں تھی۔اس نے یہاں کے جاگیر داروں سے جاگیریں چھین لیں اور ان کو بھیک مانگنے کے لئے چھوڑ دیا۔جاگیر دار بے چارے کیا کرتے۔غربت میں اور تھوڑی تھوڑی آمدنیوں میں مشکل سے گزارا کرنے لگے۔ہندوستان کے کاریگر جو چیزیں تیار کرتے تھے وہ پوری دنیا میں پسند کی جاتی تھیں۔قنوج کاعطر،امروہہ کی ریشمی ٹوپیاں اور مراد آباد کے برتن اپنی مثال آپ تھے۔یہاں کھلونے ،رومال،تلواریں،تیر کمان اور بڑھئی کاکام بھی بڑا نفیس ہوتا تھا۔جبکہ لکھنو کا چکن کا کپڑا ،بنگال کا سوتی کپڑا ور بنارس کا ریشمی کپڑا تو برطانیہ کی خواتین بڑے فخر سے خریدتی تھیں۔مگرانگریزوں نے مقامی کارخانوں کو بند کرکے اپنے کارخانے کھول لئے۔تجارت مسلمانوں کا آبائی پیشہ تھااور وہ صدیوں سے تجارت کرتے چلے آئے تھے۔جوسامان مقامی کارخانوں میں تیار ہوتاتھامسلمان بحری جہازوں کے ذریعے دوسرے ملکوں میں اس کی تجارت کرتے تھے۔مگر انگریزوں نے بندرگاہوں پر قبضہ کرکے تجارت پر بھی زبر دستی قبضہ کرلیا۔مقامی لوگوں کا سامان باہر نہ جانے دیتے اور خود سستے داموں خرید لیتے چاہے کسی کو فائدہ ہو تا یا نقصان اور آگے اچھی قیمت پر بیچ دیتے۔کسانوں اور زمینداروں پر بے تحاشا ٹیکس لگادئیے،جو ٹیکس کم دیتا اس سے زمینیں چھین کر دوسرے کو دے دیتے۔کسان سارا سال محنت کرتے اور فصل انگریز لے جاتے۔ان سب باتوں کے علاوہ مقامی لوگ انگریز کے فریب اور وعدہ خلافیوں سے تنگ آچکے تھے۔یہاں کے لوگوں اور انگریز کے درمیان جو بھی معاہدے ہوتے ،جب تک انگریز کو اپنا فائدہ نظرآتا وہ اس پر قائم رہتاورنہ فوراً معاہدہ توڑ دیتا۔ان سب مظالم کے بعد انگریز نے کھلے عام عیسائیت کی تبلیغ بھی شروع کر دی۔وہ بڑی ڈھٹائی کے ساتھ ہندوؤں اور مسلمانوں کو عیسائیت کی دعوت دینے لگے کہ جس پر وہ خود بھی عمل نہیں کرتے تھے اس سے نفرت میں مزید اضافہ ہوا اور لوگوں میں باتیں ہونے لگیں کہ انگریز ہم سے سب کچھ لوٹ کر اب ہمیں دین اور مذہب سے بھی ہٹانا چاہتاہے۔ ہندوستان کے لوگ چونکہ بہادر اور حوصلہ مند تھے اس لئے انگریز نے ایک بڑی تعداد ہندوؤں اور مسلمانوں کی فوج میں لی ہوئی تھی مگر جب بھی وہ کوئی مطالبہ کرتے اور اپنے حقوق مانگتے، توپوں کے منہ پر باندھ کر اڑا دئیے جاتے۔یہ اس قوم کے مظالم ہیں جو یہ سمجھتے ہیں کہ ہمارا جیسا کوئی مہذب دنیا میں پیدا ہی نہیں ہوا۔لوگ ان مظالم سے تنگ آ چکے تھے۔علماء اور دینی رہنما پہلے ہی خفیہ اور کبھی کھلے عام جہاد کی تبلیغ کرتے آرہے تھے۔آخر کار ،۱۰مئی ۱۸۵۷ ؁ء کو میرٹھ کے مسلما ن اور ہندو سپاہیوں نے بغاوت کردی۔انگریز افسروں کو قتل کردیا اور اسلحہ سمیت دہلی پہنچ گئے،دہلی پہنچ کر انہوں نے ملک کے مختلف حصوں کی فوجی چھاؤنیوں میں اعلانات اور پیغامات بھیجے۔ہندوستانی سپاہی پہلے ہی افسروں کی زیادتیوں کا شکار تھے۔اعلانات سنتے ہی بغاوتوں کا سلسلہ شروع ہو گیا اور سپاہی خزانے ،اسلحے اور توپوں سمیت دہلی پہنچنے لگے۔ان میں ہندو بھی تھے اور مسلمان بھی۔پہلی بغاوت ۰۱مئی کو میرٹھ میں ہوئی اسکے بعد ۱۹مئی کو الہٰ آباد،۲۰ مئی کو علی گڑھ ،۲۲ مئی کو پشاور،۳۱مئی کو گوالیار،۴جون کو حصار،۵جون کو کانپور،۷جون کو آگرہ اور لکھنو۔۲۱ جون کو جالندھر۔شروع جولائی میں جہلم،۸جولائی کو بنارساور ۲۱ جولائی کو سہارنپورمیں لگاتار بغاوتیں ہوئیں۔اس کے علاوہ انبالہ، لاہور، چیچہ وطنی،سیالکوٹ،کلکتہ اور نوشہرہ میں بھی بغاوتیں ہوئیں اور یہ سلسلہ اگست کے آخر تک جاری رہا ۔دہلی میں بہت سی باغی فوج جمع ہو چکی تھی۔ انگریزوں نے پنجاب کے لوگوں اور سکھوں کو بھرتی کر لیااور ستمبر میں دہلی پر حملہ آور ہوئے ۔کئی دن تک گھمسان کی جنگ ہوئی۔بالآخر انگریز کی چالبازیوں ،سکھوں کی غداریوں اور سازوسامان کی کمی کی وجہ سے دہلی پر انگریزوں کا قبضہ ہو گیا،اسی طرح اودھ ،کانپور،جھانسی،بنارس،الہ ٰ آباد،روہیل کھنڈاور بہار میں بھی خوں ریز لڑائیاں ہوئیں جن میں مردوں کے علاوہ عورتوں نے بھی بہادری دکھائی خاص کر حضرت محل اور رانی لکشمی بائی کانام تاریخ میں ہمیشہ زندہ رہے گا۔چونکہ ہندوتانیوں کے پاس باقاعدہ فوج نہیں تھی اس لئے قیادت اور نظم وضبط کی کمی کی وجہ سے ہندوستانی یہ جنگ ہار گئے ۔اس کے بعد بھی انگریزوں نے جب تک حکومت کی ظلم وزیادتی کے خلاف آواز بلند ہوتی رہی۔
ہماری درسی کتابوں میں ان تمام واقعات کو بغاوت سے موسوم کیا گیا ہے ۔یہ بغاوت ضرور تھی لیکن ساتھ یہ بھی ذہن میں رہے کہ در حقیقت ہماری جنگ آزادی کا نقطۂ آغاز تھااور ظلم کے نظام کے خلاف بغاوت ہی اصل آزادی ہے۔