ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
دین
تاریخ
معلومات
سائنس
دلچسپ وعجیب
طنزومزاح
جنگ و سامان جنگ
متفرق
تہذیب واخلاق
فن و فنکار
زبان و بیان
حالات و واقعات
حیوانیات
علم وادب
حشرات الارض
کھیل
پرندے
عالم اسلام
تاریخِ اسلام
جغرافیہ
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
مسلم خواتین
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
محمد علی ادیب
غلام عباس
رفیع الدین ہاشمی
کاشف شفیع
عافیہ رحمت
عافیہ رحمت
بن یامین
ڈاکٹر صفیہ سلطانہ صدیقی
محمد فیصل شہزاد
فائزہ حمزہ
حفصہ صدیقی
ابن آس
کلیم چغتائی
مریم سرفراز
مبشر علی زیدی
نیّر کاشف
قانتہ رابعہ
رؤف پاریکھ
رومانہ عمر
خواجہ حسن نظامی
شریف شیوؔہ
عبد الرحمٰن مومن
عنایت علی خان
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقنظمیں دیگر نظمیںشرارت سے شرافت تک

شرارت سے شرافت تک

عبدالقادر

آتا   ہے    یاد   مجھ   کو    ،     اسکول   کا     زمانہ                                                             
                                                             میری   شرارتوں    کا   ،     ہر   فرد   تھا     نشانہ
میری   رگوں     کے   اندر،   بسنے   لگی   شرارت                                                             
                                                             پھر مجھ کو   دھیرے دھیرے،   حاصل ہوئی مہارت
کرسی   اساتذہ     کی   ،     میں   کھینچتا    تھا   اکثر                                                             
                                                             لگتی تھی چوٹ اُن کو، گرتے تھے   جب   زمیں پر
میری   شرارتوں   سے ،  تنگ   آگئے   تھے   ٹیچر                                                             
                                                             پڑتی   رہی   ہمیشہ  ،   بیدوں   سے   مار   مجھ   پر
باغوں  سے پھل   چرانا،   میری تھی   خاص عادت                                                             
                                                             مالی کو   تنگ   کرکے،   ملتی تھی   مجھ کو   راحت
گرتے تھے   لوگ نیچے،   جب   ٹانگ میں   اڑاتا                                                             
                                                             اٹھنے سے   پہلے   اُن کے ،   میں دُور   بھاگ جاتا
بنتا   رہا      میں   اکثر    ،     مہمان     بن   بلایا                                                             
                                                             شادی گھروں میں میں نے ،   کھانا مزے سے کھایا
اپنی   غلیل  سے   جب ،   میں   پھینکتا   تھا   پتھر                                                             
                                                             لگتا   وہ   سیدھا   جا کر،   شیشے کی   کھڑکیوں   پر
مجھ کو   شرارتوں    سے ، ملنے   لگی   تھی   شہرت                                                             
|   کچھ   کارگر   نہیں تھی ، مجھ   پر   کوئی   نصیحت   |
|   گھٹی  میں     میری   شاید ،   ڈالی   گئی   شرارت   |
مجھ کو     شرارتوں   سے ،   آتی   نہ تھی کراہت                                                             
                                                             کپڑوں   پہ    دوسروں   کے، چھڑ  کی   ہے روشنائی
اپنے   قلم   سے   میں نے ،   اِک   سنچری   بنائی                                                             
                                                             اکثر  میں   باندھتا   تھا ،   لوگوں   کے   پیچھے رسی
یوں     دُم   لگا   کے میں نے ، اُن کے ہنسی اُڑائی                                                             
                                                            

آواز     ریڈیو   کی   ،   کرتا   تھا     خوب   اونچی

کمرے میں   اسٹڈی جب، کرتے تھے   میرے بھائی                                                             
                                                             چہرے پہ   ماسک رکھ   کر، پھیلائی میں نے دہشت
ایسی   شرارتوں     پر ، جوتوں   سے     مار   کھائی                                                             
                                                             گنجے کے سر پہ   اک دن ،   میں نے   چپت لگائی
اُس   نے   پلٹ   کے   فوراً، پکڑی   مری   کلائی                                                             
                                                             کہنے   لگا   کہ ’’مجھ   سے ، کیا دشمنی ہے   بھائی؟
شوخی   دکھائی   تم   نے ، اب   میری   باری آئی                                                             
                                                             جیسا   کیا   ہے   تم   نے، ویسا ہی   میں کروں گا
تم جانتے   نہیں   ہو   ، میں    ہوں   سلیم نائی ‘‘                                                             
                                                             پھر   استرا   نکالا  ،  اور   میرے   سر   پہ   پھیرا
بس   پانچ   ہی   منٹ   میں، سر کی   ہوئی صفائی                                                             
                                                             بچوں کے   اک گروہ   سے  ، بولا   وہ   گنجا   نائی
’’سر   پر   چپت   لگا   کر، کرتے   رہو   پٹائی‘‘                                                             
                                                             بچوں نے   ہر طرف   سے ، سر پر   چپت   لگائی
میں   بن   گیا     تماشا  ،   اور     نانی   یاد   آئی                                                             
                                                             میں   دوستوں   کو لے کر،   گنجے کے   پاس پہنچا
ہم سب نے مل کے اسکی، چھڑیوں سے کی دُھنائی                                                             
                                                             اِک روز   باغ میں   جب، انگور میں   نے توڑے
مالی نے   میری   اُس دن ، ڈنڈے   سے کی پٹائی                                                             
                                                             چند   روز   بعد   مالی   ،   میری   گلی   میں   آیا
غصے   کی آگ   میں نے ، اُس    روز   یوں بجھائی                                                             
                                                             میں نے   اچھل اچھل کر ، لاتوں سے   اُس کو مارا
پچیس   کِک   لگا   کر ، تسکین   میں   نے   پائی                                                             
                                                             پھر   میری   زندگی   میں   ،    اک   انقلاب   آیا
اک   پارسا   بشر   تک  ،   میری   ہوئی     رسائی                                                             
                                                             اُس مرد حق نے میری ،   حالت بدل کے رکھ دی
اُس   نے   شرارتوں   سے  ،   نفرت   مجھے    دلائی                                                             
                                                             اچھا ہے   میرا   رہبر  ،   وہ   مرد   نیک   سیرت
کرتا   ہے   ہر قدم   پر  ،   وہ   میری   رہ   نمائی                                                             
                                                             ساری   شرارتوں   سے ، کر لی ہے   میں نے توبہ
اب   دور   ہو گئی   ہے ،   ہر   قسم   کی   برائی                                                             
                                                             نیکوں   کے ساتھ   رہ کر،   جو   زندگی   گزارے
پائے گا   اس جہاں   میں ، وہ   خیر   اور   بھلائی                                                             
|   صحبت   کا   ہر   بشر   پر، ہوتا   اثر   ہے   گہرا   |
|   صحبت   ہے نیک   جس کی ، اُس نے   مراد پائی   |

 *۔۔۔*