ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
دین
تاریخ
معلومات
سائنس
دلچسپ وعجیب
طنزومزاح
جنگ و سامان جنگ
متفرق
تہذیب واخلاق
فن و فنکار
زبان و بیان
حالات و واقعات
حیوانیات
علم وادب
حشرات الارض
کھیل
پرندے
عالم اسلام
تاریخِ اسلام
جغرافیہ
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
مسلم خواتین
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
محمد علی ادیب
غلام عباس
رفیع الدین ہاشمی
کاشف شفیع
عافیہ رحمت
عافیہ رحمت
بن یامین
ڈاکٹر صفیہ سلطانہ صدیقی
محمد فیصل شہزاد
فائزہ حمزہ
حفصہ صدیقی
ابن آس
کلیم چغتائی
مریم سرفراز
مبشر علی زیدی
نیّر کاشف
قانتہ رابعہ
رؤف پاریکھ
رومانہ عمر
خواجہ حسن نظامی
شریف شیوؔہ
عبد الرحمٰن مومن
عنایت علی خان
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقنظمیں دیگر نظمیںگلفام نامہ

گلفام نامہ

عبدالقادر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گزشتہ   زمانے   کی   ہے     داستاں                      تھا   اک  ملک  کا بادشاہ   گل زماں
بڑا  ملک   تھا   اور  بہت   شان تھی   زمیں پر تھی شہرت، بہت آن  تھی
رعایا   تھی   خوش حال   اور شادماں   نہیں تھا کہیں   رنج و غم کا   نشاں
خدا   نے دیے اس کو شہزادے تین   بہت نیک سیرت  ،   نہایت   ذہین
بہت   ناز   سے   اُن  کو   پالا   گیا   علوم    و   فنوں   سے   نوازا   گیا
خزانے   میں   دولت  کا    انبار   تھا   بہت قیمتی اس میں   اک   ہار   تھا
ہر   اک   شہزادہ   اس ہار پر تھا فدا   وہی   ہار   تینوں   کو    مطلوب تھا
پریشان    اس   بات   پر   تھا   پدر   عزیز   اس کو    تھے اپنے تینوں پسر
بہت   عقل والا   تھا   شاہ کا   وزیر   بڑا   نیک دل   اور   روشن   ضمیر
اُسی    کو   بلا   کر     کیا     تذکرہ   ’’مجھے   تم   سے  درکار ہے مشورہ
خزانے میں ہے   ایک   سونے کا ہار   مرے   تینوں   بیٹے ہیں اُس پر نثار
نہیں   مجھ   کو   منظور   دل   توڑنا   کسے   ہار   دُوں   تم   بتاؤ   ذرا‘‘
وہ   کہنے   لگا   ’’ہم نکالیں گے حل   کیا   جائے  گا   پھر   اُسی پر  عمل‘‘
ہوا   طے کہ   تینوں چلائیں گے تیر   ہوا کو وہ تیروں سے ڈالیں گے چیر
بہت   آگے   جس کا   پہنچ جائے گا   وہ   شہزادہ   حقدار   ہو  جائے   گا
ہوئی   صبح صادق   تو   شاہ اور وزیر   وہ   شہزادے  لے کر کمان اور تیر
ہوئے   پانچوں جنگل کی جانب رواں   جہاں   تین   بیٹوں   کا تھا   امتحاں
اُجالا   ہوا   ہر   طرف   دشت  میں   چلائے   گئے   تیر   اک وقت میں
کمانوں    سے   وہ   تیر   آگے  گئے   اُسی   سمت   میں سب روانہ ہوئے
وہ پانچوں تھے گھوڑوں کے اوپر سوار   نتیجے   کا   اُن   سب کو   تھا انتظار
بڑے   بھائی   کا     تیر   آیا   نظر   جو   پہنچا   تھا   انگور   کی   بیل پر
گئے   اور    آگے   وہ   کہسار   میں   ملا   تیر   منجھلے   کا   اک غار میں
کئی   گھنٹے     جاری   رہا   پھر   سفر   نہیں   تیر   چھوٹے   کا   آیا  نظر
کہا   بادشاہ   نے   ’’قدم   روک لو   بہت   دُور   آئے   ہیں، واپس چلو
ہمیں   تیر   آخر   میں  جس کا   ملا   اُسے   ہار   جا کر   دیا   جائے   گا
تھا   گلفام   چھوٹا،   وہ   رونے   لگا   بہاتے   ہوئے   اشک،   کہنے   لگا
’’ پلٹ کر  یہاں سے نہیں جائیں گے   ہے اک تیر آگے، اُسے لائیں گے‘‘
نہیں   بات   چھوٹے   کی   مانی  گئی   خوشامد   بھی   بے کار   ثابت ہوئی
کہا اُس نے   ’’واپس نہیں جاؤں گا   اکیلا   ہی   جا کر   اسے  لاؤں گا‘‘
وہ   گلفام کو   چھوڑ کر   چل دیئے   بیاباں   میں   تنہا   اسے    کر گئے
سفر     آگے     گلفام   کرتا     رہا   لیے   چشم   پُر نم،   وہ   بڑھتا رہا
وہ   وعدہ   خلافی   پہ   دل گیر   تھا   غم و یاس   کی   زندہ   تصویر   تھا
ملا     راستے   میں   بڑا    سا   شجر   نظر   آیا   وہ   تیر   اک  شاخ   پر
شجر   سے   چڑھا،   تیر  کو   چھو لیا   ذرا   کھینچ   کر   اُس کو  حاصل   کیا
بڑا       کارنامہ       دکھایا       مگر   نہیں   مل   سکا   اُس کو   اچھا ثمر
تھا   گلفام   پر   غم   کا   گہرا   اثر   شروع   پھر   ہوا   واپسی   کا   سفر
اچانک   یہ   محسوس   اس   کو    ہوا   کوئی   اس کے   پیچھے  ہے بیٹھا   ہوا
پلٹ کر   جو   دیکھا   تو   گھن  آگئی   بڑی  سی   بندریا   تھی   بیٹھی  ہوئی
اسے   زور   سے   ایک   دھکا   دیا   زمیں   پر   بندریا   کو     پہنچا   دیا
اچھل   کر   بندریا   ہوئی   پھر سوار   نہیں   مانی   انسان   سے   اپنی  ہار
دوبارہ     بندریا     کو   دھکا     دیا   زمیں   بوس   اُس   جانور   کو   کیا
یہی   کھیل   دونوں   کا   ہوتا   رہا   وہ      آتی   رہی  ،  وہ   گراتا     رہا
لگا   سوچنے   اس میں   کیا راز ہے   بندریا   کا   یہ   کیسا     انداز   ہے
مجھے   اس نے   بندر تو سمجھا نہیں؟   مرا   منہ   تو   لنگور   جیسا   نہیں؟
مجھے     سمجھے     لنگور   یا     آدمی   نہیں   پیار کی اس کے دل میں کمی
اسے   پیار ہے   ایک   انسان   سے   محبت   ملی   مجھ   کو   حیوان   سے
بندریا  کو    اب میں کروں گا نہ دُور   اسے   ساتھ   اپنے  رکھوں گا ضرور
اسے محل   میں   ساتھ   لے کر گیا   وہ  خوش تھا   کہ اک پیارا ساتھی ملا
ہوئی   رات   تو   اک    تماشا   ہوا   بندریا     کا   جب   راز   افشا   ہوا
بدن   سے   اتاری   بندریا نے کھال   تو   ظاہر   ہوئی  اک پری بے مثال
پری تھی نہاں کھال   میں اس طرح   صدف  میں ہو پنہاں گہر جس طرح
کہا   اس پری  نے   ’’سدا خوش رہو   خدا   سے   مراد   اپنی   مانگا   کرو
جو   گزری   ہے تم پر، مجھے ہے خبر   پری   ہوں  ،   پرستان   ہے مستقر
ہے میرے گلے میں جو ہیروں کا ہار   اسے کر رہی ہوں میں تم پر   نثار‘‘
اسے  ہار دے کر  وہ   رخصت   ہوئی                       مگر   جاتے   جاتے   نصیحت   یہ کی

’’نہ کرنا کبھی فانی دنیا سے پیار
فقط  آخرت  ہے    بہت پائیدار‘‘