ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
اسلامی مضامین
تاریخی مضامین
معلوماتی مضامین
سائنسی مضامین
دلچسپ مضامین
مزاحیہ مضامین
جنگی مضامین
دیگر مضامین
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
زبان و بیان
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقنظمیں دیگر نظمیںایک چھوٹی بچی کے خصائل

ایک چھوٹی بچی کے خصائل

مولانا الطاف حسین حالیؔ

 

سیدہ        کیسی            پیاری           بچی            ہے  
صورت     اچھی     سمجھ     بھی     اچھی      ہے  
  ذرا        دیکھو           تو              اس کی        صورت        کو
  سچی        چینی           کی          جیسی           مورت          ہو
ہے   ابھی   دو   برس  کی    خیر    سے   جان  
پر   سب    اچھے    برے   کی   ہے   پہچان  
  ماں     نے      جو        کچھ        اسے       سکھایا     ہے
  جو               ادب               قاعدہ                بتایا                ہے
وہ      سبق      سارے      اس کو       ہیں      ازبر  
نقش   ایک    ایک    بات    ہے   دل   پر  
  ہے       ادب       سے        بڑوں کا        لیتی    نام
  سب کو      کرتی    ہے     ہاتھ     اٹھا  کے    سلام
پھر ا دب  سے  وہیں   سلام   کے   ساتھ  
پوچھتی       ہے       مزاج       جوڑ      کے      ہاتھ  
  جھوٹ      موٹ       اس کو       گر      ڈراتے   ہیں
  بات        ڈر          کی          کوئی           سناتے          ہیں
پکے   پن       سے        یقیں       نہیں      کرتی  
دیر       تک       ہے       نہیں       نہیں  کرتی  
  وہ          کسی        بات        پر              مچلتی             نہیں
  اپنی        عادت            کبھی              بدلتی            نہیں
ایک        بیماری       سے       تو      ہے      لاچار  
ورنہ           روتی        نہیں          کبھی              زنہار  
  اسی             کم              عمر               بے سمجھ                  ہو کر
  دودھ             بھی             مانگتی             نہیں          رو    کر
بے    پیے    دودھ     جب      نہیں    سرتی  
ہے      وہ       ماں       کی        خوشامدیں      کرتی  
  کبھی         کہتی        ہے       پیار       سے ’’اماں !‘‘
  اور            کبھی          ڈالتی            ہے         گل      بَیّاں
کوٹ کوٹ اس میں ہے بھری غیرت  
اس کو     کوئی    گھرک     دے      کیا    طاقت  
  ماں      نے         جھوٹوں      کبھی       جو       گھور     دیا
  اس        نے           سچ مچ           وہیں           بسور       دیا
ماں    کی  خفگی    سے    ہے    بہت   ڈرتی  
اس      کے      تیور       ہے     دیکھتی      رہتی  
  جب    ذرا      دیکھتی        ہے       چپ     ماں      کو
  بار       بار        اس کو          کہتی         ہے       ’’ بولو ! ‘‘
ماں   یہ    سن کر        اگر         ذرا         ہنس   دی  
پھر    کوئی    دیکھے    اس کی     آکے     خوشی  
  ہنستی        ہے            اور              کھلکھلاتی            ہے
  بچی           پھولی            نہیں             سماتی               ہے
چاہنے      والے      اس  کے      ہیں      جو جو  
خوب      پہچانتی       ہے       ایک       اک     کو  
  پھوپھیوں         سے         تو      ہے       لگاؤ      بہت
  گھر     کا       خالاؤں      کے     ہے        چاؤ     بہت
ہے       چچاؤں      کے       نام       کی      عاشق  
ان        کے         کلمے        کلام        کی      عاشق  
  غور        سے         ان کا           پڑھنا        سنتی      ہے
  اور        سن سن       کے        سر    کو    دھنتی    ہے
ختم  ہو چکتے    ہیں    جب   ان  کے     بول  
کہتی       ہے        بار       بار      ’’   ابا        اول‘‘
 
  آرزو          تو         بہت           ہے           بولنے           کی
  پر          نہیں       اٹھتی        ہے           زبان       ابھی
یوں تو تھی جب ہی پیاری اس کی زباں  
جب  کہ  کرنے  لگی   تھی   وہ   غوں  غاں  
  پھر       تو         آتا      ہے    اس    پہ     اور    بھی    پیار
  ہوتی          جاتی         ہے         جس             قدر        ہشیار
نہیں     منہ      سے     نکلتے     پورے     بول  
بولتی        ہے          سدا        ادھورے         بول  
  لوٹ           جاتے           ہنستے           ہنستے             سب
  زرگری           اپنی              بولتی            ہے            جب
نئے   آتے    ہیں  گھر   میں    جب    مہماں  
دیکھ      دیکھ       ان کو        ہوتی     ہے      خنداں  
  پا     کے         بیٹھا           ادھر           ادھر        سب     کو
  دیکھتی               ہے              مڑمڑ                      سب      کو
اوپری      شکل       سے          ہے        گھبراتی  
ہے   مگر   جلد    سب      سے       ہل      جاتی  
  ہیں    جو       ماں       جائے      بھائی      اور        بہن
  یوں تو ہے سب کی اس کے دل میں لگن
پر    ذرا     بھائی      سے    ہے    لاگ   اس کو  
کیوں   کہ    اوپر    تلے    کے     ہیں    دونوں  
  پس      جہاں        بھائی       ماں      کے    پاس    آیا
  اور           وہیں          اس       نے        ہاتھ           پھیلایا
جا     لپٹتی     ہے      دوڑ       کے    ماں    سے  
بھائی    سے     کہتی    ہے    ہٹو    یاں   سے  
  عمر               اس کی             خدا             دراز                کرے
  علم             سے             اس کو          سرفراز          کرے
چڑھیں    ماں    باپ     کی     سلامتی      میں  
سارے      پروان       بھائی        اور        بہنیں