ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
اسلامی مضامین
تاریخی مضامین
معلوماتی مضامین
سائنسی مضامین
دلچسپ مضامین
مزاحیہ مضامین
جنگی مضامین
دیگر مضامین
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
زبان و بیان
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقنظمیں دیگر نظمیںپیشے

پیشے

مولانا الطاف حسین حالیؔ

(ماں سے بیٹوں کی گفتگو)

 

(۱)

میں  بڑا ہوں گا  جب تو  اماں جان
اپنے    مقدور    بھر     بنوں  گا    کسان
کام    جو      کرنا      چاہو     ہے      آسان
ہیں    یہ  آخر     کسان     بھی      انسان
نہیں محنت سے ہوں میں گھبراتا
خالی      پھرنا      نہیں       مجھے       بھاتا
ہل       چلاؤں     گا        بیج       بوؤں    گا
شوق    میں   کھاؤں گا   نہ   سوؤں گا
وقت    پر   جب   کہ   غلہ   کاٹوں   گا
بھائیوں   بہنوں   کا   حصہ   بانٹوں گا
ناج    سے    گھر    تمہارا  بھر دوں  گا
ان   سے   تم   کو   نچنت  کر دوں گا
چھکڑے  بھر بھر  کے شہر جاؤں گا
ناج   کے   بدلے  چاندی لاؤں گا
بھس  کے   انبار یاں   لگا   دوں   گا
گائے  بیلوں  کو  میں  چھکا  دوں گا
اتنی       لایا         کروں       گا       ترکاری
کہ      نہ     آئے گی    پکنے   کی   باری
الغرض      خوب        سا         کماؤں     گا
جو      کماؤں گا      گھر     میں    لاؤں    گا
کام  کوئی  نہ     پھر      رہے      گا     بند
میں   بنا دوں   گا   تم کو   دولت مند

(۲)

میں    جواں   ہوں گا      جب      تو   اماں جان
اپنے  جی  میں  یہ میں نے لی ہے ٹھان
تم      نے        مجھ کو          اگر         اجازت        دی
فوج        میں     جاکے      ہوں گا  میں   بھرتی
ہے بہت ہی یہ میرے جی میں امنگ
سیکھ          لوں        میں      کہیں      قواعدِ       جنگ
میں  نے  سیکھی  ہے  مدرسوں  میں  ڈرل
ایسی       ہو گی         کہاں        کی          وہ       مشکل
گو        نہیں        ہوں        سپاہی         زادہ        میں
ہوں        سپاہی         سے        پر         زیادہ       میں
جنگ        کی       ہے        مہم       سے    کیا    ڈرنا
آدمی      کو          ہے           ایک         دن           مرنا
مشق             بندوق              کی                لگانے      کی
رسم           ہے           آج کل            زمانے        کی
روز مرہ        کا          ہے            یہ        خاصا    کھیل
ہوئی       تو         کیا         کبھی  لبھی        کی     جھمیل
کام            اپنا              کیا           کروں گا              خوب
فرض           اپنا          ادا            کروں گا           خوب
حکم         کی      وہ       کروں گا          میں        تعمیل
کہ      نہ    ہو گی   ذرا    بھی    اس    میں   ڈھیل
کیا             عجب           ہے          رسالدار            بنوں
اور         سواروں           میں         شہ سوار            بنوں
فوج              میں         ہو        کچھ           آبرو         میری
ہے       یہ       مدت        سے           آرزو      میری
ملک   میں   جب کہ   ہو گی    میری    دھاک
اونچی         ہو جائے         گی         تمہاری       ناک
پھر       تو      تم کو      بھی     اے    میری     اماں
سب     کہیں         گے        رسالدار      کی     ماں

(۳)

میری      جاں     اور     میری    اماں  جی
میں    بڑا      ہوں      تو     چاہتا   ہے   جی
گھر   میں    بیٹھا     رہوں    نہ   یوں   خالی
آپ       کے        باغ        کا    بنوں    مالی
خود  ہی  اس کام سے مجھے ہے لگاؤ
کوئی      مجھ کو          بتاؤ           یا           نہ         بتاؤ
کیاریاں       ہر    طرح     کی    کھودوں   گا
خوب    ان کی    ز میں     کو     گودوں    گا
ایسا    رکھوں گا   رستہ    صاف    ان کا
کہیں      ڈھونڈا      نہ       پائے     گا      تنکا
نت     نئے    پھول    میں    اگاؤں    گا
دیکھنا       کیسے        گل          کھلاؤں        گا
باغ     میں     اپنے     نہر    لوں گا    میں
سر      درختی    میں   پانی   دوں گا   میں
جو       لگاؤں گا     پود    جائے     گی  لگ
اور         پودے      لگاؤں گا      سو     الگ
موتیا           اور         چنبیلی        اور            جوہی
روز     کے     روز    ڈھیروں   اترے    گی
ہے   بہت  شوق تم کو پھولوں سے
روز    لاؤں گا     جھولیاں        بھر       کے
کیوں    نہ   آئے گی    آئے   دن   ڈالی
جب   خدا    اپنے    گھر    کا    دے  مالی
کس طرح   ہوگی    پھر    نہ    خوش    حالی
آپ     کا       باغ    ،          آپ      کا    مالی

(۴)

میری     تو     یہ   خوشی    ہے    اماں    جی
کہ    بڑا       ہو کے       میں     بنوں     دھوبی
صبح     اٹھتے      ہی       ہاتھ      اور    منہ    دھو
فارغ       اپنی       ضرورتوں         سے          ہو
روز            جایا            کروں گا               دریا          پر
لادی      کپڑوں      کی      بیل     پر    لے کر
چھوڑ دوں  گا     بیل      کو     وہاں    چرنے
اور        کام         اپنا      پھر        لگوں    کرنے
اونچے      کرکرکے    دست  و  بازو     میں
کپڑے    دھویا    کروں گا  چھوا   چھو    میں
لاؤں  دھو دھو  کے  ایسے  میں  کپڑے
اجلے،      براق،      صاف    اور   ستھرے
برف        شرمائے           دیکھ    کر          جن کو
آنکھ    میں    میل    ہو   اور   ان  میں نہ وہ
محنت   اس طرح  کرکے  میں  دن بھر
گھاٹ      سے         آؤ        شام       کو    گھر   پر
ٹھیک کرکے کلپ سے کندی سے
مالکوں    کو    دے     آؤں     جلدی    سے
پھر      یوں ہی      میلے      کپڑے     لالا   کر
از          سر نو            چڑھاؤں          بھٹی            پر
گھاٹ    کی    آج  ،    گھر    کی   کل   باری
رہے     یہ     سلسلہ       یوں     ہی     جاری
الغرض      خوب      کپڑے      دھوؤں     گا
نہ       چراؤں گا        اور       نہ       کھوؤں      گا
نہ    کبھی    کام     سے     تھکوں   گا    میں
کام      یہ       خوب      کر سکوں      گا     میں
کھاؤں   گا         اور       کھلاؤں      گا        اماں
تم کو        میں         حق      حلال          کا         لقما

(۵)

جبکہ  ہوں گا  میں  بڑا  تو  اے حضرت
لوں گا    کوئی    پولس   کی   میں خدمت
کنسٹیبل             بنوں        گا           اول        بار
اور       پھر        رفتہ      رفتہ       تھانے    دار
پھر          ہوا        سامنے         نصیب          اگر
کوتوالی            کا              آئے            گا           نمبر
گشت        کرتا       پھروں گا          راتوں    کو
دیکھتا     چوٹّوں           کی           گھاتوں           کو
چور  ،         اچکے   ،     اٹھائی       گیرے      جو
پاؤں گا   ،        باندھ     لاؤں گا    سب   کو
میرے   دل   پر   رہے گا   چور  کا  داغ
جب تک اس کا لگا نہ لوں گا سراغ
بدمعاشوں      کو       تنگ        کر دوں       گا
جیل  خانوں  کو    ان   سے   بھر دوں گا
جو    کروں گا     تو    میں  دل و جاں سے
راست    بازی    سے   اور   ایماں سے
نہیں     کرنے      کا     تیرا      میرا     خوف
دل  میں  رکھوں گا  بس  خدا  کا خوف
ہو    گر    اس   نوکری     میں     خوف    خدا
تو     نہیں     کام     کوئی  اس  سے   بھلا

(۶)

میں   بڑا   ہوں گا   جب کہ     بی  اماں
ہو سکا         تو        بنوں گا        چٹھی   رساں
ڈاک    خانے   سے     ڈاک    لاؤں  گا
پھرتی    سے    جاؤں گا   اور    آؤں    گا
لے کے سب چٹھیوں کا میں طومار
اور       لگا       کر       انہیں        محلے          دار
بانٹ    آیا      کروں       گا       نام       بنام
صبح       کی     صبح      اور     شام   کی    شام
کارڈ       ہوں    یا      لفافے     یا    پیکٹ
پارسل       اور         سارے         پیمفلٹ
لاؤں     گا        اپنی      ذمہ داری    سے
اور      دوں گا     بھی    ہوشیاری    سے
حق    خدمت       ادا    کروں     گا      میں
غفلتوں     سے       بچا    کروں   گا    میں
کام      اپنا        کروں گا         چستی       سے
نہ   کہ        مچلائی         اور        سستی      سے
خط    کسی    کا   نہ   میں  کروں گا  تلف
نہ       بنوں گا        ملامتوں       کا      ہدف
کھاؤں        گا      اور    کھلاؤں    گا    ایسی
تم کو         اماں         حلال        کی     روزی

(۷)

جب  کہ        اماں    جوان    ہوں  گا    میں
اک      بڑھئی     مستری       بنوں گا       میں
نہ   بڑھئی   وہ،    ہے  جن کا نام  بڑھئی
جوکہ پھرتے ہیں کہتے ’’ کام بڑھئی‘‘
بلکہ               ایسا            بنوں   گا          کاری  گر
خود        غرض مند      آئیں   جس کے   گھر
آرزو      یہ         میری         بر   آئے       کاش
دیکھنا         پھر        میری      تراش     خراش
میں     نہانی    سے    اور    بسولے    سے
ایسے     کتروں گا          پھول        اور    پتے
کہ       کروں گا          مصوروں       کو       مات
رہوں  مات ان کو کرکے تو ہے بات
اس      ہنر       میں     بنوں گا     میں    استاد
اور         کروں گا        نئے         نئے         ایجاد
لکڑی        برتا          کروں        گا         میں    نگّر
آئے  ،       لاگت         زیادہ        آئے       اگر
چیز       گھٹیل          کبھی          نہ         بیچوں     گا
نفع       سے        ایسے         ہاتھ    کھینچوں  گا
میرا         سامان         ہو گا          سب         اچھا
عمدہ          سے        عمدہ      تحفہ      سے   تحفہ
کارخانہ         خود          اک            بنا لوں          گا
بیسیوں              کاریگر              بٹھالوں               گا
ہوگی    جب     ہر    طرف    مری   شہرت
دیکھنا         گاہکوں         کی        پھر         کثرت
مستری                ایک           ہو          اگر      ہشیار
ہر        جگہ    اس کے    مشتری  ہیں  ہزار

 

مزید اس صنف میں: « موچی دھان بونا »