ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
اسلامی مضامین
تاریخی مضامین
معلوماتی مضامین
سائنسی مضامین
دلچسپ مضامین
مزاحیہ مضامین
جنگی مضامین
دیگر مضامین
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
زبان و بیان
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقنظمیں دیگر نظمیںگھڑیاں اور گھنٹے

گھڑیاں اور گھنٹے

مولانا الطاف حسین حالیؔ

ہوں   جس قدر     آفاق     میں     گھڑیاں      ہوں      کہ      گھنٹے
ہے   سب کا    عمل    ایک، بڑے  یا  کہ  ہوں  چھوٹے
چھوٹے     بھی     کسی     طرح     بڑوں     سے   نہیں    بیٹے
دراصل   یہ    سب    ایک    ہی   تھیلی   کے   ہیں  بٹے
گو    ایک     سے     ان کے     نہیں     ہوتے     قدوقامت
طے  کرتے  ہیں  پرسب کے سب اک ساتھ مسافت
دوپہر       ہو         یا          رات         ہو        یا       صبح      ہو       یا       شام
جب      دیکھیے     چلنے      سے    سدا     اپنے      انہیں      کام
لیتے       کسی       ساعت         کسی           لحظہ         نہیں        آرام
ہو       جاتے      اسی       میں       ہیں       بسر       عمر      کے   ایام
نقل و حرکت     سے    انہیں      فرصت     نہیں     دم بھر
گویا      انہیں           جانا           ہے         کہیں         دور         مہم         پر
ہر چند            کہ          رفتار              میں           اپنی           نہیں          مختار
پر          ٹھہرنے         کو        اپنے      سمجھتے        ہیں    یہ   بے کار
رہتے       ہیں     سفر        ہی      میں،    ہو   دن   یا   کہ شبِ تار
ہٹتے        نہیں         پیچھے          قدم          ان  کے        دم        رفتار
جب        دیکھیے         پاتے         ہیں         یہ         سرگرم        روانی
عمر         گزراں            کی            کہو            ایک             ان کو           نشانی
دم            رکھتے        ہیں      گو     جان   نہیں   رکھتے   بدن   میں
گویا     ہیں ،    زباں     گرچہ      نہیں     ان کے      دہن      میں
عادت     میں     نرالے     ہیں     انوکھے     ہیں     چلن  میں
دیکھا         یہ          انہی کو        کہ       مسافر      ہیں         وطن      میں
ہے    جیسے      کہ       گردش        میں          زمانہ          سحر     و    شام
ان کا         وہ        سفر          ہے     نہیں     جس کا     کہیں  انجام
خشکی          ہو        گزرگاہ            میں             ان کی           کہ             سمندر
کھاڑی         ہو          کہ          ہو       جھیل ،       جزیرہ       ہو     کہ      بندر
مینار        کے         اوپر        ہوں       کہ       تہہ خانے    کے    اندر
رکھے        انہیں          پاس         اپنے          سکندر          کہ         قلندر
ان کو     نہیں        یاں       اونچ       کا       یا         نیچ       کا     کچھ     غم
اپنی     اسی   ’ٹک ٹک‘      سے      سروکار       ہے      ہر دم
کھٹکا         انہیں        آندھی       کا        نہ       بارش       کا      خطر    کچھ
نقصاں نہیں    جاڑے     سے    نہ    گرمی      سے     ضرر    کچھ
طوفان       کا         کچھ        خوف        نہ          بھونچال        کا    ڈر    کچھ
ہوں       لاکھ        تغیر  ،        نہیں          پر            ان     کو          خبر          کچھ
کچھ           موسم گل         کی         نہ          خزاں        کی      انہیں    پروا
ہیں       دونوں         برابر         انہیں           پچھوا           ہو        کہ     پُروا
سُمن       کے      کھٹاکے       سے       کم     ان کا    نہیں   کھٹکا
خارص       ہے       یہ       اک       یادِ    خدا       کے        لیے       لٹکا
کوڑا         ہے       یہ      اس    کے    لیے      جو    راہ    سے    بھٹکا
کانٹوں      میں      دیا      دامن       دل        جس  نے        کہ      اٹکا
دیتے        ہیں،       سنو        غور         سے،         ہر    دم     یہ    دہائی
لو        وقت         چلا       ہاتھ        سے  ،         کچھ         کر          لو         کمائی
کیا    ان    کی    بساط    اور      کہو       کیا       ان   کی    ہے    اوقات
جانے      دو     نہیں        ان       میں         اگر         کوئی       کرامات
انصاف        کرو         تو       ہے         یہی        کتنی       پڑی     بات
جس  کام  کے  ہیں  اس میں لگے رہتے ہیں دن رات
ہیں        چلنے        میں         تھکتے           نہ      ٹھٹکتے         نہ         مچلتے
جس         راہ         پہ        دو         ڈال        اسی        راہ      میں      چلتے

 

مزید اس صنف میں: « شیر کا شکار موچی »