ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
دین
تاریخ
معلومات
سائنس
دلچسپ وعجیب
طنزومزاح
جنگ و سامان جنگ
متفرق
تہذیب واخلاق
فن و فنکار
زبان و بیان
حالات و واقعات
حیوانیات
علم وادب
حشرات الارض
کھیل
پرندے
عالم اسلام
تاریخِ اسلام
جغرافیہ
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
مسلم خواتین
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
محمد علی ادیب
غلام عباس
رفیع الدین ہاشمی
کاشف شفیع
عافیہ رحمت
عافیہ رحمت
بن یامین
ڈاکٹر صفیہ سلطانہ صدیقی
محمد فیصل شہزاد
فائزہ حمزہ
حفصہ صدیقی
ابن آس
کلیم چغتائی
مریم سرفراز
مبشر علی زیدی
نیّر کاشف
قانتہ رابعہ
رؤف پاریکھ
رومانہ عمر
خواجہ حسن نظامی
شریف شیوؔہ
عبد الرحمٰن مومن
عنایت علی خان
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز

سبز گیند

غلام عباس

۔۔۔۔۔۔۔۔

ٍآج سے بہت پہلے کی بات ہے۔چین کے بادشاہ کے تین بیٹے تھے۔سب سے بڑے بیٹے کا نام آسو تھا۔منجھلے کا باسو،اور سب سے چھوٹے کا نام تاسو تھا۔

ایک دن اس بادشاہ کے پاس کسی دوسرے مُلک کے بادشاہ کا قاصد خط لے کرآیا،جس میں لکھا تھا کہ آپ اپنے تینوں بیٹوں کو کچھ دنوں کے لیے میرے یہاں بھیج دیں۔میری اکلوتی بیٹی کھاسوان تینوں شہزادوں میں جسے پسند کرے گی ،اس کے ساتھ شہزادی کھاسو کی شادی رچا دی جائے گی۔

دوسرے دن چین کے بادشاہ نے اپنے تینوں بیٹوں کو اپنے پاس بلایااور ان کو اس خط کے بارے میں تفصیل سے بتایااور پھر ان تینوں کو کچھ ہدایات دے کرایک بڑے لاؤ لشکر کے ساتھ تینوں شہزادوں کواُس بادشاہ کے مُلک کی طرف روانہ کر دیا۔

جب ان شہزادوں نے آدھا راستہ طے کر لیا تو کچھ دیر آرام کرنے کے لیے جنگل میں ایک خُوب صورت جگہ کا انتخاب کرکے ٹھہر گئے۔

یہ دن بڑا سہانا تھا۔ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں چل رہی تھیں۔ہر طرف سبزہ بکھرا ہوا تھا۔پرندے اپنی اپنی بولیوں میں چہچہارہے تھے۔چڑیوں کے گیت سُن سُن کر درخت جُھوم رہے تھے۔میٹھے پانی کے چشمے جاری تھے۔ہرن چوکڑیاں بَھرتے اِدھر اُدھر بھاگ ڈور رہے تھے۔بندر اس خوشگوار موسم سے لُطف اُٹھا رہے تھے اور خوش ہو کر ایک درخت سے دوسرے درخت پر قلا بازیاں کھا رہے تھے۔ایک طرف سے ہاتھیوں کا غول جُھومتا چلا آرہا تھا۔

ایسا خوشگوار نظارہ تھا کہ ہر طرف بہار ہی بہار تھی۔تینوں بھائی اس پُر بہار موسم سے اور زیادہ لُطف اندوز ہونا چاہتے تھے۔

اچانک تینوں شہزادوں نے باقی کا راستہ پیدل چلنے کا فیصلہ کیا۔چنانچہ انھوں نے باقی کا لاؤ لشکر واپس بھیج دیااور کہا کہ ہم آدھے سے زیادہ راستہ تو طے کر ہی چکے ہیں۔درختوں کی ٹھنڈی اور گھنی چھاؤں میں ہنستے کھیلتے مزے مزے سے چلتے رہیں گے سیر کی سیر ہو جائے گی اور سفر بھی کٹ جائے گا۔اور پھر ہمارے پاس سامان تو اتنا ہے ہی نہیں۔خُود آپ ہی اُٹھا لیں گے۔اس سے بازؤوں میں طاقت بھی آئے گی۔

یہ سب سوچ کر تینوں شہزادوں نے اپنا لاؤ لشکر اور گھوڑے واپس بھیج دیے،اور خود اپنا اپنا سامان اُٹھا کر مزے مزے سے ہنستے گاتے اپنی منزل کی طرف چل دیے۔

لیکن ابھی وہ تینوں تھوڑی ہی دُور گئے تھے کہ شہزادہ آسو اور باسو نے اپنا اپنا سامان بھی چھو ٹے بھائی شہزادے تا سو کے حوالے کرتے ہوئے کہا:

’’تاسو میاں!جب تم تھک جاؤ گے تو بتا دینا۔پھر یہ سارا سامان ہم اُٹھا لیں گے۔‘‘

یہ کہہ کر دونوں بھا ئی جلدی جلدی چلنے لگے۔لیکن بے چارہ تاسو بوجھ کی وجہ سے اُن سے بہت پیچھے رہ گیا۔

شہزادے آسو اور باسو آگے آگے جارہے تھے۔اُنھیں راستے میں ایک خرگوش ملا۔خرگوش نے اُن دونوں سے التجا کی کہ میرے بِل میں ایک پتھر گر گیا ہے۔اسے نکال دیجیے۔

دونوں شہزادوں نے خرگوش کی بات سن کر ایک زوردار قہقہہ لگایااور پتھر کوبِل کے اور بھی اندر کر دیا،اور ہنستے ہوئے آگے چل دیے۔

جب شہزادہ تاسو سامان اُٹھائے اس خرگوش کے پاس سے گزرا تو خرگوش نے اس سے بھی یہی التجا کی کہ میرے بِل میں سے پتھر نکال دو۔

شہزادہ تاسو بڑا رحم دل تھا ۔اُس نے سا مان کو زمین پر رکھ دیا۔اور جُھک کر بِل سے پتھر باہر نکال دیا۔

خرگوش خوش ہو کر کہنے لگا۔

’’میاں تا سو !سبز گیند اُٹھانا۔‘‘یہ کہہ کر خرگوش جھاڑیوں کی طرف بھاگ گیا اور نظروں سے اوجھل ہو گیا۔

دوسرے دن جب تینوں شہزادے شہزادی کھاسو کے شہر میں پہنچے تو ان کا بہت شاندار استقبال کیا گیا۔اور ان کوایک جلوس کی شکل میں محل میں لایا گیا۔اُن کی بہت خاطر مدارت کی گئی۔پھر شہزادی نے ان سے کہا:

’’یہ تین رنگین گیندیں ہیں۔تم تینوں ایک ایک گیند اُٹھا لو۔شہر سے باہر ایک بہت بڑا میدان ہے،وہاں جا کر تم نے ان گیندوں کو پھینکنا ہے۔جس کی گیند سب سے دُور جا کرگرے گی۔میں اُس کے ساتھ شادی کروں گی۔‘‘

اس وقت شہزادہ تاسو کو خرگوش کی بات یاد آگئی کہ تا سو میاں سبز گیند اُٹھانا۔‘‘دل ہی دل میں وہ حیران تھا۔اللہ جانے کیا ماجرا ہے،مگر اُس نے سبز گیند اُٹھا لی۔باسو نے سیاہ اور آسو نے سُرخ گیند لے لی۔گیندیں لے کر تینوں شہزادے ایک کُھلے میدان میں پہنچے ،جہا ں پر لمبی لمبی گھاس اُ گی ہوئی تھی۔تینوں بھائی ایک قطار میں کھڑے ہو گئے اور اپنی اپنی گیند پھینکی۔جب سبز گیند گھاس پر گِری تو خرگوش جو پہلے ہی سے گھاس میں چُھپا بیٹھا تھا،جَھٹ گیند کو مُنہ میں پکڑا اور تیزی سے بھاگتا ہوا گیند کو دونوں بھائیوں کی گیندوں سے آگے لے گیا۔تب شہزادہ تا سو کی شادی شہزادی کھاسو سے ہوگئی۔اور دونوں ہنسی خوشی محل میں رہنے لگے۔

اُدھر جب آسو اور باسو سر پر اپنا اپنا سامان اُٹھا کر ہانپتے ہوئے آہستہ آہستہ گھر کی طرف لوٹ رہے تھے تو اُن کے سامان کے اُوپر خرگوش بیٹھا ہنس رہا تھا۔

لیکن شہزادہ آسو اور شہزادہ باسو کویہ بات معلوم نہ تھی۔

مزید اس صنف میں: « ایک ٹانگ کا بادشاہ