ترتیب روشنائی

کلام الہی
قرآنی آیات
قرانی معلومات
فرمان نبوی
احادیث نبوی
سنت نبوی
کہانیاں
آیت کہانیاں
ایک حدیث ایک کہانی
اسلامی کہانیاں
سچی کہانیاں
تاریخی کہانیاں
نصیحت آموز کہانیاں
گھرتوآخر۔۔۔۔!
لوک کہانیاں
اخلاقی کہانیاں
دلچسپ کہانیاں
سونے کی تین ڈلیاں
سبق آموز کہانیاں
سائنسی کہانیاں
معلوماتی کہانیاں
شکار کہانیاں
جاسوسی کہانیاں
مزاحیہ کہانیاں
جانوروں کی کہانیاں
جنوں پریوں کی کہانیاں
وطن کہانیاں
ٹارزن کی کہانیاں
بادشاہوں،شہزادوں کی کہانیاں
جادو کی کہانیاں
سیر کہانیاں
جرم کی کہانیاں
جنگی کہانیاں
عمروعیّارکی کہانیاں
شرارت کہانیاں
مضامین
دین
تاریخ
معلومات
سائنس
دلچسپ وعجیب
طنزومزاح
جنگ و سامان جنگ
متفرق
تہذیب واخلاق
فن و فنکار
زبان و بیان
حالات و واقعات
حیوانیات
علم وادب
حشرات الارض
کھیل
پرندے
عالم اسلام
تاریخِ اسلام
جغرافیہ
نظمیں
حمد
نعت
دیگر نظمیں
لطائف
ادبی لطائف
تاریخی لطائف
دیگر لطائف
ڈرامہ
ناول
اقوال زریں
دعائیں
قرآنی دعائیں
مسنون دعائیں
نبوی دعائیں
صحابہ کی دعائیں
دیگر دعائیں
سیرۃ نبی کریم
متفرق
ہمارے رسول پاکﷺ
اُجالا
موقع بہ موقع
۱۷ رمضان، غزوۂ بدر
رمضان المبارک
عید الفطر
۲۷ دسمبر، یوم قائد اعظم
۵ فروری، یوم کشمیر
۹ نومبر، یوم اقبال
۲۷ رجب، معراج مصطفیٰ ﷺ
۱۰ ذالحجہ،عید الاضحیٰ
قصے
حدیث کے قصے
قرآنی قصے
حکایات
حکایات شیخ سعدیؒ
حکایات شیخ سعدی
حکایات سعدیؒ
حکایات مولانا رومیؒ
حکایات مولانا رومی
حکایات رومیؒ
دیگر حکایات
دیگر حکایات
ملک اور شہر
ملک
شہر
ضرب المثل / کہاوتیں
شخصیات
انبیاء کرام
صحابہ کرام
مسلم شخصیات
تاریخی شخصیات
مغربی شخصیات
نامور شخصیات
دیگر شخصیات
صحابیات
مسلم خواتین
پہیلیاں
اسلامی نام
بچیوں کے اسلامی نام
ث
ت
پ
ب
ا
بچوں کے اسلامی نام
قلمکار
اعظم طارق کوہستانی
حسام چندریگر
شمعون قیصر
محمد الیاس نواز
حماد ظہیر
فریال یاور
علّامہ محمد اقبال
صوفی غلام مصطفیٰ تبسم
مولوی اسماعیل میرٹھی
شوکت تھانوی
احمد حاطب صدیقی
اشفاق حسین
پطرس بخاری
سیما صدیقی
فوزیہ خلیل
طالب ہاشمی
اشتیاق احمد
نذیرانبالوی
حبیب حنفی(شان مسلم)
قاسم بن نظر
طالب ہاشمی
راحیل یوسف
میر شاہد حسین
عبد القادر
غلام مصطفیٰ سولنگی
راحیل یوسف
احمد عدنان طارق
نوشاد عادل
بینا صدیقی
راحت عائشہ
فاطمہ نور صدیقی
اخترعباس
نجیب احمد حنفی
گل رعنا
جاوید بسام
ضیاء اللہ محسن
نائلہ صدیقی
امتیاز علی تاج
سعید لخت
راحمہ خان
معروف احمد چشتی
معروف احمد چشتی
فہیم احمد
دیگر
عظمیٰ ابو نصر صدیقی
ہدیٰ محسن
نظر زیدی
ظفر شمیم
شریف شیوہ
احمد ندیم قاسمی
مستنصرحسین تارڑ
مسعود احمد برکاتی
منیر احمد راشد
ڈاکٹرعمران مشتاق
شازیہ فرحین
محمد علی
مولانا الطاف حسین حالیؔ
ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
عمیر صفدر
محمد علی ادیب
غلام عباس
رفیع الدین ہاشمی
کاشف شفیع
عافیہ رحمت
عافیہ رحمت
بن یامین
ڈاکٹر صفیہ سلطانہ صدیقی
محمد فیصل شہزاد
فائزہ حمزہ
حفصہ صدیقی
ابن آس
کلیم چغتائی
مریم سرفراز
مبشر علی زیدی
نیّر کاشف
قانتہ رابعہ
رؤف پاریکھ
رومانہ عمر
خواجہ حسن نظامی
شریف شیوؔہ
عبد الرحمٰن مومن
عنایت علی خان
ویڈیوز
معلومات
گوشہ خصوصی
مساجد
تاریخی عمارات
اقبالؒ نے کہا۔۔۔
تحریر کیسے لکھیں؟
مشاعرے
اسلامی تصورات پر ڈرامے
مزاحیہ ڈرامے
کلیہ و دمنہ ۔ اردو
چھوٹے بچوں کے لئے تحریریں
لڑکیوں کےلئے تحریریں
چچا چھکن
شرلاک ہومزکی کہانیاں
سفرنامے
ملاقاتیں/انٹرویوز
آپ یہاں ہیں: سرورقکہانیاںدلچسپ کہانیاںکھلونوں کی بستی

کھلونوں کی بستی

غلام عباس

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رشیدہ کا پیاراکُتا ڈبو آج صبح سے غائب ہے۔خالہ امّاں ملنے آئی تھیں۔رشیدہ دن بھر اُن کے بچّوں کے ساتھ کھیلنے کُودنے میں بہلی رہی۔ڈبو کا اس کو خیال تک نہ آیا۔لیکن جب رات ہوئی اوررشیدہ پلنگ پر سونے لگی تو ایک دم اُسے ڈبو یاد آگیا۔جسے رات کو سوتے وقت رشیدہ اپنے سینے سے لگا کر سویا کرتی تھی۔وہ رنجیدہ سی ہو کر کہنے لگی:’’ہائے رے میرے ڈبو!میں تجھے کہاں ڈھنڈوں؟اللہ جانے تو مجھ سے خفا ہوگیا ہے یا پھر مجھے ستانے کے لیے شرارت سے کہیں چُھپ رہا ہے۔پیارے ڈبو آجا۔‘‘

لیکن ڈبو نہ آیا۔

آدھی رات کا وقت تھا۔رشیدہ غم سے نڈ ھال ہو کر اپنے پلنگ پر پڑی سو رہی تھی۔اچانک اُس کی آنکھ کُھل گئی،لیکن رشیدہ کو اس بات کا پُورا پُورا یقین تھا کہ یہ خواب نہیں ہے بلکہ وہ پُوری طرح جاگ رہی ہے۔

رشیدہ ایک عجیب و غریب بستی میں پہنچی ہوئی تھی اور اس بستی کے چھوٹے چھوٹے بازاروں میں اِدھر سے اُدھر گُھوم پھر رہی تھی۔

بازاروں میں آنے جانے والوں کاتانتا بندھا ہوا تھا۔اتنی بھیڑ ہو رہی تھی کہ کھوے سے کَھوا چِھلتا تھا۔موم کی گُڑیاں،چینی کی گڑیاں،اور پرستان کی شہزادیاں کھٹ پٹ کھٹ پٹ کرتی ہوئی آنکھوں کے آگے سے گُزر جاتی تھیں،کہ جی یہی چاہتا تھا انھیں گھنٹوں دیکھتے ہی رہیں۔

لمبی لمبی جٹاؤں والے سادھو پیپل کے بڑے بڑے گھنے درختوں کے سائے میں دُھونی رُمائے بیٹھے تھے۔بُھورے بندر بانسوں پر اُچھل کُود رہے تھے،مداری کالے کالے ریچھوں کو نچا رہے تھے۔حوضوں میں سفید مومی بطخیں تَیر رہی تھیں۔بلّیاں کبوتروں کی تاک میں بیٹھی ہوئی تھیں ۔عربی گھوڑے سرپٹ ڈور رہے تھے۔ہرن چوکڑیاں بھر رہے تھے۔ 

ایک طرف سے کوئی بڑا راجہ ہاتھی پر سوارچلا آرہا تھا۔ ایک طرف مور اپنے رنگ برنگے پر پھیلائے ناچ رہے تھے اور سورج کی روشنی میں ان کے پروں میں سے آگ نکلتی ہوئی معلوم ہوتی تھی۔چڑیاں درختوں پر بیٹھی خدا کی تعریف میں حمد گارہی تھیں۔

بازاروں میں ٹانگے والوں کی ’’ہٹو،بچو‘‘ کی صدائیں آرہی تھیں۔

ریل گاڑیاں چھَک چھَک اور موٹر کاریں پھٹ پھٹ کرتی ہوئی دوڑی جا رہی تھیں۔جہازوں سے دھواں نکل رہاتھا۔کھیتوں میں رہٹ چل رہے تھے۔سقے سڑکوں پر چھڑکاؤ کر رہے تھے۔غرض کہ اس چھوٹی اور نرالی بستی میں ایسی چہل پہل تھی کہ کسی بڑے ملک میں بھی نہ ہوگی۔

لوگ تو خیر مزے مزے سے چل پھر رہے تھے،لیکن ریل گاڑیاں اور موٹریں اس تیزی سے مکانوں کے ارد گرد گھوم رہی تھیں کہ دیکھ کر تعجب ہوتا تھا۔

رشیدہ آنکھیں پھاڑ پھاڑ کر ان چیزوں کو دیکھ رہی تھی۔وہ ان سب سے اتنی بڑی تھی کہ اونچے اونچے مکانوں کی ممٹیاں اس کی کمر تک پہنچتی تھیں۔

اس بستی کے بہت سے لوگ اس کی چھو ٹی چھوٹی ٹانگوں سے چمٹے ہوئے تھے ۔کوئی اس کی شلوار کا پائنچاپکڑے ہوئے تھا، کوئی اسے اپنی جانب کھینچ رہا تھا۔کوئی دھکیل رہاتھا۔کوئی اس کی انگلی پکڑ کر کہتا تھا:

’’چلو میرے ساتھ!‘‘

چھوٹے چھوٹے بندر کبھی اس کے سر پر سوار ہو کر اس کے بالوں کو نوچتے تھے۔کبھی اس کے شانوں پر چڑھ کر گدگدیاں کرتے تھے۔ ایک اونٹ دھاڑیں مارمار کر رو رہا تھا۔ایک کوا گلا پھاڑ پھاڑ کر کائیں کائیں کررہا تھا۔ ایک بلی چوہے کے پیچھے بھاگ رہی تھی۔ بس کچھ نہ پوچھو،اس بستی میں کیا کیا تماشا ہو رہا تھا۔

رشیدہ اس بستی میں کافی دیر تک گھومتی رہی،اور ان ننھے منے لوگوں کی حرکتیں دیکھ دیکھ کر ہنستی رہی اور خوش ہوتی رہی۔ آخر تنگ آکر کہنے لگی:

’’بس اب چپ ہو جاؤ۔‘‘

یہ سنتے ہی سب کے سب جہاں کے تہاں تھم گئے لیکن ریل گاڑیاں اور موٹر کاریں اسی رفتار سے برابر چلتی رہیں۔ایسا معلوم ہوتا تھا کہ قیامت بھی آجائے تو ان کی بلا سے۔یہ نہیں ٹھہرنے کی۔رشیدہ نے ان سب لوگوں کو مخاطب کرتے ہوئے پوچھا :

’’تم کون ہو؟ اور میں کہاں ہوں؟‘‘

یہ سن کر ایک لکڑی کے بنے ہوئے سپاہی کے کان کھڑے ہوئے ۔اپنی پگڑی کو سنبھالتے ہوئے اس نے ناک صاف کی اور سلام کرکے کہنے لگا:

’’سرکار! ہم دنیا کے کھوئے ہوئے کھلونے ہیں اور یہ کھوئے ہوئے کھلونوں کی بستی ہے۔بی بی جی! کیا آپ ہمیں یہاں سے لینے آئی ہیں؟ ہم یہاں بہت اداس ہیں۔

آپ ہمیںیہاں سے ضرور لے چلیں۔‘‘

ایک بھالو ہاتھ جوڑتے ہوئے بولا:

’’میری اچھی اور پیاری بی بی جی!ہم بھی آپ کے ساتھ ضرور جائیں گے۔آپ ہمیں چھوڑ کر مت جائیں۔‘‘

رشیدہ ابھی سوچ ہی رہی تھی کہ انہیں کیا جواب دے ،اسے ایسا محسوس ہوا، جیسے کوئی اس کے دہنے پاؤں کا انگوٹھا چاٹ رہا ہے اور اس کا سارا پاؤں بھیگ گیا ہے۔اس نے نیچے جھک کر دیکھا تو وہ حیران رہ گئی۔وہ اس کا پیارا کتا ڈبو تھا۔بے چارے کی آنکھوں سے آنسو جاری تھے۔ بھرائی ہوئی آواز میں کہنے لگا:

’’رشیدہ بی بی ! مجھے اپنے ساتھ لے چلو۔میں یہاں نہیں رہنا چاہتا۔رشیدہ بی بی میں بھی تمہارے ساتھ جاؤں گا۔میرا یہاں جی نہیں لگتا۔میں بہت اداس رہتا ہوں۔میں تمہارے ساتھ ہی جاؤں گا۔‘‘یہ کہہ کر وہ پھوٹ پھوٹ کر رونے لگا۔

رشیدہ نے جلدی سے اپنے ڈبو کو اٹھا لیا۔ اٹھا کر چھاتی سے لگا لیا اور سر پر پیار سے ہاتھ پھیرا اور پھر گود میں اٹھائے وہاں سے جب چلنے لگی تو سب کھلونوں نے شور مچانا شروع کر دیا اور پھوٹ پھوٹ کر رونے لگے۔سب نے مل کر رشیدہ کا راستہ روک لیا،اور کہنے لگے:

’’بی بی جی! ہمیں بھی اپنی ساتھ لے چلو۔‘‘

’’سرکار!ہمیں یہاں چھوڑ کر مت جاؤ۔‘‘

’’پیاری بی بی ! ہم سب آپ کے ساتھ جائیں گے۔‘‘

رشیدہ نے اس مصیبت سے اپنی جان چھڑانے کے لئے اس کھوئے ہوئے کھلونوں کی بستی کے چھوٹے سے بازار میں سے بھاگنا شروع کیا۔ لیکن کھلونے بھی کب پیچھا چھورنے والے تھے وہ بھی اس کے پیچھے پیچھے روتے اور چلاتے بھاگے۔جتنی تیزی سے رشیدہ بھاگتی۔ اتنی ہی تیزی سے کھلونے بھی بھاگتے اور چلاتے:

’’سرکار ہمیں نہ چھوڑ جاؤ۔بی بی جی ہمیں نہ چھوڑ جاؤ۔‘‘

بھاگم بھاگ رشیدہ ٹھوکر کھا کر دھم سے گری....اور ...ارے .....رشیدہ پلنگ سے نیچے گری پڑی تھی۔رضائی،سرہانااور بچھوناسب نیچے گرے ہوئے تھے۔رشیدہ فرش پر سے کپڑے جھاڑ کر اٹھی ۔کیا دیکھتی ہے کہ خالی چارپائی پر اس کا کتا ڈبو پڑا ہنس رہا ہے۔